Posted by: Seeker of the Sacred Knowledge | February 14, 2012

Hazrat Ghazi Ilm Deen Shaheed


The 1920’s in India witnessed the publishing of an inflammatory book vilifying Prophet Muhammad Peace Be Upom Him thereby adding fuel to the existing Muslim/Hindu tensions. The British Raj ruled India and the creation of Pakistan was still a distant dream in the hearts of the Indian Muslims. The Muslim population was understandably incensed and mass protests were held. Prashaad Prataab had authored Rangeela Rasool (The Colourful Prophet), under the pen name of Pandit Chamupati Lal. The word rangeela means ‘colourful’ but can be understood in this context to mean ‘playboy’.

Rajpal was a Hindu book publisher from Lahore. He took the responsibility of publishing the book in 1923 and pledged not to disclose the author’s real name. Pressure from the Muslim community resulted in the matter being taken to Session court Lahore which found Raj Pal guilty and sentenced him. Subsequently Rajpal appealed against the decision of Session Court in the Lahore High court. The appeal was heard by Judge Daleep Singh who gave leave to appeal on the grounds that on the basis of criticism against the religious leaders, no matter how immoral it is, is not covered by S.153 of the Indian Penal Code. Thus Rajpal could not be sentenced as law did not cover blasphemous criticism against religion. The High Court decision was widely criticised and protests were made against it by Muslims of India. Little did anyone suspect that one young man’s course of action would bring about a significant change in the Law, ensuring that Islam would be covered by blasphemy laws.

Full Article Here :

https://seekerofthesacredknowledge.wordpress.com/biographies-of-awliya-allah/hazrat-ghazi-ilm-deen-shaheed/

Video on Hazrat’s Life :


Responses

  1. فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    لبيك ۔۔۔۔۔۔ لبيك ۔۔۔۔۔۔ لبيك ۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    ھر ديس ميں گونجے گا ۔۔۔ اب يا رسول اللہ
    لبيك ۔۔۔۔۔۔ لبيك ۔۔۔۔۔۔ لبيك ۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    ھم سر پہ کفن باندھے ۔۔۔ ميدان ميں نکلے ھيں
    باطل کے محلوں کو ھم ڈھانے نکلے ھيں
    ھمت ھے تو ھميں روکو !
    ھمت ھے تو ھميں ٹوکو !
    ھم نعرہء رسالت کو پھيلانے نکلے ھيں
    نعرہء رسالت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ

    ھر شخص پکارے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب يا رسول اللہ
    ھر ديس ميں گونجے گا ۔۔۔ اب يا رسول اللہ

    ھم ساری دنيا ميں ھلچل سی مچا ديں گيں
    سرکار کے عاشق ھيں رنگ اپنا جما ديں گيں
    ھر ديس ميں گونجے گا ۔۔۔ اب يا رسول اللہ

    سودا نہ کريں گيں ھم ۔۔۔ ايمان نہ بيچيں گيں
    ناموس رسالت پر دنيا کو ھلا ديں گيں
    کھلے عام کہنا ھے !
    سر بازار کہنا ھے !
    پکارو ! يا رسول اللہ
    خدا کی ساری زمين ۔۔۔۔۔۔۔ مصطفے کے عاشقوں سے بھری پڑی ھے
    نبی کی ناموس پر مٹنے والے ساری دنيا ميں پھيلے ھؤۓ ھيں
    جہاں جہاں جاؤ گۓ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وھاں وھاں عاشقان رسول پاؤ گے
    دوستو ! جرآت سے کام لو !
    اسلام کا دامن تھام لو !
    ذات پات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہسب و نسب کے بتوں کو پاش پاش کر ڈالو !
    آور کہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ھم اسلام کے ليۓ ذندہ ھيں
    آور
    اسلام کے ليۓ ھی مرنا چاھتے ھيں
    يا رسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ھم تيرے ھيں
    يہ قافلہ اب چل پڑا ھے
    اب رکے نہ رکے
    ھمارے راستوں کو روکنے کے ليۓ کانٹوں کی باڑيں کھڑی کی جائيں
    ظلم کی ديواريں کھڑی کی جائيں
    ھم انہيں پھاندتے ھوۓ منزل مقصود تک پہنچ جائيں گيں
    ارے سر فروشو ! اب آگے بڑھتے جانا
    اب نام رسالت گونجے گا
    اب گستاخوں کی خير نہيں
    طوفاں پہ طوفاں آٹھا ھے
    اب آنے والے آئيں گيں
    کٹتے بھی چلو !
    بڑھتے بھی چلو !
    بازو بھی بہت !
    سر بھی بہت !
    چلتے ھی چلو !
    دوستو ! جب تک اس جسم ميں خوں باقی ھے
    آور
    جب تک خون ميں حرارت باقی ھے
    قسم اس پيدا کرنے والے کی
    ھم يا رسول اللہ کا نعرہ لگانا نہيں چھوڑيں سکتے
    نعرہ ء رسالت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    نعرہ ء رسالت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    ھر ديس ميں گونجے گا ۔۔۔ اب يا رسول اللہ

    سرکار کی عزت پہ مرنا ھے ھميں لوگو !
    يہ وعدہ ھمارا ھے سب کچھہ ھی لٹا ديں گيں
    ھر ديس ميں گونجے گا ۔۔۔ اب يا رسول اللہ

    ھم نے يہی ٹھانی ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منت يہی مانی ھے
    اس ديس کی مٹی پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ خوں اپنا بہا ديں گيں
    ھر ديس ميں گونجے گا ۔۔۔ اب يا رسول اللہ
    اسلام جو مذھب ھے ۔۔۔۔ پيغام محبت ھے
    اس امن کے پرچم کو گھر گھر لگا ديں گيں
    نعرہء تکبير ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ اکبر
    نعرہء رسالت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ

    جوش ايماں کی گرمی سے ھر مسلم جاگے گا
    پاک وطن سے ديکھنا يارو ! ھر دشمن بھاگے گا

    لکھيں گيں تاريخ وفاء ھم خون سے اپنے لوگو !
    دوھرائيں گيں کرب و بلا ھم خون سے اپنے لوگو !

    نس نس ميں بجلی جاگی ھے وقت شہادت آيا
    دين ميں ھم نے کمر باندھی ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وقت شہادت آيا

    نبی کے غلاموں سے نہ الجھو يہ دنيا ميں پھيل گيۓ
    گستاخوں کو ختم کريں گيں اپنی جان پہ کھيل کے

    جانوں کا نذرانہ لے کر مقتل مقتل جائيں گيں
    حرمت آقاء پر ھم تو سولی پہ چڑھ جائيں گيں

    سولی پہ چڑھ جائيں گيں
    لبيك يا رسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    لبيك يا رسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ

    فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    لبيك ۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    لبيك ۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    لبيك ۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    آقاء آپ کے يہ غلام
    اپنی جانيں لٹا ديں گيں
    اپنے گھر بار لٹا ديں گيں
    مگر
    آپ کی ناموس پر حرف نہيں آنے ديں گيں
    فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔۔۔ فداك ۔۔۔۔ يا رسول اللہ
    لبيك ۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ لبيك۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ يا رسول اللہ


Bismillah Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Categories

%d bloggers like this: